سینیٹ انتخابات کیلئے کاغذات نامزدگی جمع کرانے کی تاریخ میں توسیع

اعلامیہ کے مطابق ای سی پی نے ان تمام حقائق کو مدنظر رکھتے ہوئے امیدواروں کی سہولت کے پیش نظر کاغذات نامزدگی جمع کرانے کی آخری تاریخ 15 فروری مقرر کردی۔

0 9

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

الیکشن کمیشن پاکستان (ای سی پی) نے سینیٹ انتخابات میں امیدواروں کے کاغذات نامزدگی جمع کرانے کی تاریخ میں توسیع کردی، تاہم انتخابات اپنی مقررہ تاریخ 3 مارچ کو ہی ہوں گے۔

ای سی پی کے جاری اعلامیہ کے مطابق الیکشن کمیشن ذرائع ابلاغ کے ذریعے یہ بات اجاگر کی گئی کہ وقت کی کمی کی وجہ سے امیدواروں کو اپنے کاغذات نامزدگی جمع کرانے میں قانونی تقاضوں کو پورا کرنے میں مشکلات ہورہی ہیں اور اسی سلسلے میں کاغذ نامزدگی جمع کرانے کے دنوں میں اضافے کی تحریری و زبانی درخواستین بھی موصول ہوئیں۔

اعلامیہ کے مطابق ای سی پی نے ان تمام حقائق کو مدنظر رکھتے ہوئے امیدواروں کی سہولت کے پیش نظر کاغذات نامزدگی جمع کرانے کی آخری تاریخ 15 فروری مقرر کردی۔

ای سی پی کے مطابق نامزد امیدواروں کی فہرست 16 فروری کو آویزاں کی جائے گی، مزید یہ کہ کاغذات نامزدگی کی جانچ پڑتال 17 اور 18 فروری کو ریٹرننگ افسران کے دفاتر میں ہوگی۔

اس کے علاوہ ریٹرننگ افسران کی جانب سے کاغذات نامزدگی منظور یا مسترد کیے جانے کے فیصلوں کے خلاف ٹریبیونل میں اپیل کرنے کی حتمی تاریخ 20 فروری مقرر کی گئی ہے۔

مزید یہ کہ ان اپیلوں کو نمٹانے کی آخری تاریخ 23 فروری ہے جبکہ ٹریبیونل کے فیصلوں کی روشنی میں امیدواروں کی نظرثانی شدہ فہرست 24 فروری کو آویزاں کی جائے گی۔

اعلامیہ کے مطابق کاغذات نامزدگی واپس لینے کی تاریخ 25 فروری ہے۔

واضح رہے کہ 11 فروری کو الیکشن کمیشن نے سینیٹ انتخابات کے شیڈول کا اعلان کرتے ہوئے پولنگ کے لیے 3 مارچ کی تاریخ مقرر کی تھی جبکہ کاغذات نامزدگی کے لیے 13 فروری آخری تاریخ تھی۔

واضح رہے کہ سینیٹ کے 104 اراکین میں سے 52 اراکین اپنی 6 سالہ مدت ختم ہونے کے بعد 11 مارچ کو ریٹائر ہوجائیں گے جس میں قبائلی اضلاع کے 8 میں سے 4 سینیٹر بھی شامل ہیں اور اب قبائلی اضلاع کے خیبرپختونخوا میں ضم ہونے کی وجہ سے یہ چار نشستیں پُر نہیں کی جاسکتیں جس سے سینیٹ کی مجموعی نشستیں کم ہو کر 100 رہ جائیں گی۔

48 اراکین سینیٹ کو منتخب کرنے کے لیے پولنگ 3 مارچ کو ہوگی جس میں خیبرپختونخوا اور بلوچستان سے 12، 12 سینیٹرز، پنجاب اور سندھ سے 11،11 جبکہ اسلام آباد سے 2 سینیٹرز کو منتخب کیا جائے گا۔

پولنگ میں چاروں صوبوں سے عام نشستوں پر 7 اراکین، 2 نشستوں پر خواتین، 2 نشستوں پر ٹیکنوکریٹس کو چُنا جائے گا جبکہ خیبرپختونخوا اور بلوچستان سے اقلیتی نشست پر ایک، ایک رکن منتخب ہوگا۔

خیال رہے کہ 11 مارچ کو اپنی 6 سالہ مدت ختم ہونے پر ریٹائر ہونے والے سینیٹرز کی 65 فیصد تعداد اپوزیشن جماعتوں سے تعلق رکھتی ہے۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Privacy & Cookies Policy