عالمی یومِ خواتین کے موقع پر مختلف شہروں میں عورت مارچ کا انعقاد

یاد رہے کہ سال 2018 میں سب سے پہلے کراچی میں عورت مارچ کیا گیا تھا جس کے بعد اگلے سال مزید شہروں مثلاً لاہور، ملتان، فیصل آباد، لاڑکانہ اور حیدرآباد میں بھی عورت مارچ کیا گیا تھا۔

5

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

پاکستان کے مختلف شہروں میں عالمی یومِ خواتین کے موقع پر عورت مارچ کا انعقاد کیا جارہا ہے جس میں شریک شہری ملک میں خواتین کے حقوق کے تحفظ کا مطالبہ کررہے ہیں۔

یاد رہے کہ سال 2018 میں سب سے پہلے کراچی میں عورت مارچ کیا گیا تھا جس کے بعد اگلے سال مزید شہروں مثلاً لاہور، ملتان، فیصل آباد، لاڑکانہ اور حیدرآباد میں بھی عورت مارچ کیا گیا تھا۔

اس طرح رواں برس بھی کراچی، لاہور اسلام آباد سمیت کئی شہروں میں ان کا انعقاد کیا جارہا ہے جس میں خواتین کی بڑی تعداد شریک ہے۔

ہر شہر میں عورت مارچ کے منتظمین نے اپنا منشور پیش کیا ہے کراچی کے منتظمین نے اپنے منشور میں پدر شاہی تشدد، لاہور کے منشور میں ہیلتھ کیئر ورکرز اور خواتین کی صحت کو اپنا موضوع بنایا جبکہ اسلام آباد کا مارچ دیکھ بھال کے بحران کے نام کیا گیا ہے۔

کراچی

کراچی میں عورت مارچ فیریئر ہال کے مقام پر منعقد ہورہا ہے اور کورونا وائرس کی صورتحال کو مدِ نظر رکھتے ہوئے منتظمین نے شرکا پر اسٹینڈرڈ آپریٹنگ پروسیجرز (ایس او پیز) بشمول ماسک پہننا اور سماجی فاصلہ برقرار رکھنے کے لیے زور دیا ہے۔

کراچی میں عورت مارچ کے منتظمین نے جو مطالبات پیش کیے ان میں پدر شاہی طاقتوں کی جانب سے صنفی بنیادوں پر تشدد، رضاکاروں پر سرکاری تشدد، کا خاتمے علاوہ صنفی بنیاد پر جرائم کا منصفانہ اور تیز ٹرائل کرنا شامل ہے۔

دیگر مطالبات میں ریپ متاثرین کے کنوار پن کے ٹیسٹ، سندھ اور پاکستان کے پولیس اسٹیشنز میں صنفی تشدد کے سیلز کا قیام اور جنسی ہراسانی کا خاتمہ شامل ہے۔

لاہور

لاہور میں عورت مارچ کے سلسلے میں ریلی کا آغاز لاہور پریس کلب سے ہوا جو پنجاب اسمبلی کے سامنے سے ہوتا ہوا پی آئی اے کی عمارت تک پہنچی۔

لاہور کے منشور میں خواتین اور ہیلتھ کیئر ورکرز کی صحت پر توجہ مرکوز رکھتے ہوئے حکومت کی جانب سے بنیادی ضروریات کی فراہمی اور بدسلوکیوں کا شکار وہ خواتین جنہیں ذہنی اور جسمانی دیکھ بھال کی ضرورت ہے ان کے لیے بہتر انفرا اسٹرکچر کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

علاوہ ازیں منشور کی دستاویز میں صحت کے مسائل پر بھی تحفظات کا اظہار کیا گیا جس میں بریسٹ کینسر، تولیدی صلاحیت، فاررینزک سروسز کے لیے پیسوں کی وصولی(بشمول ریپ متاثرین سے وصولی)، ایچ آئی وی، مفت ادویات تک رسائی، ٹرانسجینڈر ایکٹ 2018 کا نفاذ، صاف پانی، ٹوائلٹ بالخصوص خواتین ہیلتھ ورکرز کا کورونا وائرس سے تحفظ، کم عمری کی شادیوں اور دیگر مسائل شامل ہیں۔

اسلام آباد

اسلام آباد میں بھی بڑی تعداد میں خواتین نے خود کو درپیش مسائل اور حقوق کے تحفظ کے لیے عورت مارچ میں شرکت کی۔

گزشتہ برس اسلام آباد میں عورت مارچ کی صورتحال اس وقت کشیدہ ہوگئی تھی جب اس کی مخالفت میں نکالے جانے والے حیا مارچ کے مرد شرکا نے عورت مارچ کے شرکا پر پتھر پھینکے تھے جس سے ایک فرد زخمی ہوگیا تھا تاہم بعد میں پولیس صورتحال قابو کرنے میں کامیاب رہی تھی۔

خواتین واک

علاوہ ازیں کراچی سمیت مختلف شہروں میں جماعت اسلامی خواتین ونگ کے زیر اہتمام عالمی یومِ نسواں کی نسبت سے ‘خواتین واک’ کا اہتمام کیا گیا جس میں خواتین کارکنان شریک ہوئیں۔

کراچی کے پریس کلب پر بڑی تعداد میں جماعت اسلامی سے تعلق رکھنے والی خواتین سے اس واک میں شرکت کی۔

جماعت اسلامی کی خواتین واک کے شرکا—تصویر: فیس بک جماعت اسلامی کراچی

واک میں شرکت کرنے والی خواتین نے جو بینر اٹھا رکھے تھے ان پر ‘شوہر اور بیوی مدِ مقابل نہیں، معاون و مددگار ہیں’، ‘ہمارے خاندانی نظام کی تباہی ہمارے دشمن کا ایجنڈا ہے’ اور ‘مہر وراثت عزت دو مجھ کو گھر پر رہنے دو’ کے نعرے درج تھے۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

تبصرے

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Privacy & Cookies Policy