سپریم کورٹ: قانون کی تعلیم کے معیار پر کمیٹی تشکیل دینے کیلئے سینئئر وکلا کے نام طلب

قائم قام چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے وکلا کی جعلی ڈگریوں سے متعلق فیصلے پر عمل درآمد کیس کی سماعت کی۔

0 1

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

سپریم کورٹ نے جعلی ڈگری اور لا کالجز کا معیار جانچنے کے لیے سینیئر وکلا پر مشتمل کمیٹی تشکیل دینے کا عندیہ دے دیا۔

قائم قام چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے وکلا کی جعلی ڈگریوں سے متعلق فیصلے پر عمل درآمد کیس کی سماعت کی۔

قائم مقام چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیےکہ مسئلے کو سمیٹنا چاہتے ہیں سپریم کورٹ صرف وکلا کی مدد کرسکتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ کیس وکلا کے تعلیمی معیار کو بہتر بنانے کے لیے سنا گیا تھا تاہم سپریم کورٹ کے فیصلے پر ابھی تک عمل درآمد نہیں ہوسکا، پاکستان بار کونسل کو اس سارے عمل کا جائزہ لینا چاہیے۔

دورانِ سماعت وکیل عامر علی شاہ نے معاملے پر مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) تشکیل دینے کی تجویز دی۔

قائمقام چیف جسٹس نے مزید ریمارکس دیے کہ وکیل امتحانات سے نہیں تجربہ سے بنتے ہیں بار کونسلز نام تجویز کریں معاملے پر کمیٹی تشکیل دیں گے۔

بعدازاں عدالت نے بارکونسلز سے سینئر اور پیشہ ور وکلا کے نام طلب کرتے ہوئے سماعت 2 ہفتوں کے لیے ملتوی کردی۔

خیال رہے کہ مئی 2018 میں اس وقت کے چیف جسٹس ثاقب نثار نے وکلا کی جعلی ڈگریوں کے معاملے پر از خود نوٹس لیا تھا۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Privacy & Cookies Policy