fbpx
دنیا سائنس و ٹیکنالوجی گیجٹ

جنسی تسکین کے لئے سیکس روبوٹ کے استعمال سےجان بھی جا سکتی ہے

 کمپیوٹر ٹیکنالوجی، اور خصوصاً مصنوعی ذہانت کے میدان میں حیرتناک ترقی نے گزشتہ صدی کے اواخر میں روبوٹ جیسی ایجاد کو بھی ممکن بنا دیا۔

ابتدائی طور پرتو یہ ایجاد اچھی نیت سے کی گئی تھی لیکن جلد ہی یہ ٹیکنالوجی شیطان کے پیروکاروں کے ہاتھ بھی لگ گئی اور جنسی تفریح کے لئے بھی روبوٹ بنائے جانے لگے۔ اب صورتحال یہ ہے کہ مصنوعی ذہانت کے حامل روبوٹ جنسی تسکین کے لئے استعمال ہو رہے ہیں، لیکن ایک عالمی شہرت یافتہ سائبر سکیورٹی ایکسپرٹ نے خبردارکیا ہے کہ ہیکر بآسانی جنسی روبوٹس کو ہائی جیک کرکے انسانوں کے قتل کے لئے استعمال کر سکتے ہیں۔ 
سکیورٹی ماہرین خصوصاً انٹرنیٹ سے منسلک روبوٹس کے خطرات کے بارے میں ایک عرصے سے خبردار کررہے ہیں، جبکہ حال ہی میں سینکڑوں سائنسدانوں نے عالمی حکومتوں سے مطالبہ کیا ہے کہ مصنوعی ذہانت کے حامل روبوٹس کو بطور ہتھیار استعمال کرنے کا راستہ روکنے کے لئے اقدامات کئے جائیں۔ 
ڈیکن یونیورسٹی میلبرن کے سائنسداننکولس پیٹرسن کا کہنا ہے ’’ہیکر کسی بھی روبوٹ کو ہیک کرکے اس پر مکمل کنٹرول حاصل کرسکتے ہیں اور مصنوعی ذہانت کے حامل روبوٹس کو بطور ہتھیار استعمال کیا جاسکتا ہے۔ یہ روبوٹ عموماً بہت طاقتور ہوتے ہیں۔ ایک بار ان کا کنٹرول کسی ہیکر کے پاس آجائے تووہ اسے اپنی مرضی کے مطابق ہدایات دے سکتا ہے۔ یقیناًآپ کبھی نہیں چاہیں گے کہ کسی روبوٹ کا کنٹرول کسی ہیکر کے ہاتھ لگ جائے کیونکہ ہیکر ان کا خوفناک استعمال کرسکتے ہیں۔‘‘
سائنسدانوں نے جنسی مقاصد کے لئے استعمال ہونے والے مصنوعی ذہانت کے حامل روبوٹس میں پہلے ہی کچھ ایسی خامیاں دریافت کرلی ہیں جن کی مدد سے کوئی بھی ہیکر ان کا ریموٹ کنٹرول حاصل کر سکتا ہے۔ ماہرین کا تو یہ بھی کہنا ہے کہ برین کمپیوٹر انٹرفیس کو ہیک کرکے بھی منفی عزائم رکھنے والے ہیکر انسان کے جذبات اور افعال پر اثر انداز ہوسکتے ہیں اور اسے اپنی مرضی کے مطابق چلاسکتے ہیں۔ 
سائنسی جریدے نیچر میں شائع ہونے والے مضمون میں بتایا گیا ہے کہ برین کمپیوٹر انٹرفیس کے ذریعے انسانی دماغ کی لہروں سے روبوٹس کو کنٹرول کیا جاسکتا ہے۔ ایسی صورت میں عین ممکن ہے کہ محض دماغ کی لہروں کی مدد سے کسی روبوٹ سے کسی انسان کا قتل کروایا جا سکے۔


اس خبر کے حوالے سے اپنی آراء کا اظہار کمنٹس میں کریں

Tags

About the author

زرناش اریحا

زرناش اریحا، آسٹریا کے شہر ویانا میں رہائش پذیر ہیں اور دنیا بھر کی مشہور ویب سائٹس سے خبریں تلاش کر کے پاک ایشیاء کے قارئین، سامعین و ناظرین کے لیے انہیں پاک ایشیاء ویب سائٹ کی زینت بناتیں ہیں۔
زرناش آسٹریا میں بطور کنٹری ہیڈ بھی اپنے فرائض نہایت خوش اسلوبی سے سرانجام دئے رہیں ہیں۔

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.




From Google