fbpx
پاکستان سیاست

عید کے فوری بعد 9سے10ارب کی بڑی ریکوری ہونے والی ہے : شہزاد اکبر

  گزشتہ دور میں ملی بھگت سے حدیبیہ پیپز ملز کیس کو ختم کیا گیا

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے بیرسٹر شہزاد اکبر کا کہنا تھا کہ نواز شریف نے 90ء کی دہائی میں چودھری شوگر ملز کیلئے 15 ملین ڈالر قرضہ لیا، یہ قرضہ بحرین میں لیا گیا اور سبسڈی آف شور کمپنی کے ذریعے لی گئی، ابھی قرض کی رقم پاکستان نہیں پہنچی تھی، شوگر مل پہلے ہی قائم ہو گئی، بیرونی قرض سے شوگر مل کیلئے مشینری لی جانی تھی

شہزاد اکبر نے کہا کہ ان کا کوئی بزنس نہیں, بس یہی بزنس منی لانڈرنگ ہے۔ منی لانڈرنگ کے لیے قاضی خاندان کو استعمال کیا گیا جو پہلے ہی بیان حلفی کے ذریعے اعتراف کر چکا ہے۔ انہوں نے انکشاف کیا کہ عید کے فوری بعد 9 سے 10 ارب کی ریکوری ہونے والی ہے۔

معاون خصوصی برائے احتساب کا کہنا تھا کہ چودھری شوگر ملز میں پوری شریف فیملی شیئر ہولڈر ہے۔ اگر ان کے پاس کوئی منی ٹریل ہے تو نیب کو دیں۔ ایسے کرتوتوں کی وجہ سے ملک کی معیشت کا یہ حال ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ چودھری شوگر ملز کے نام پر کروڑوں روپے کی سالانہ سبسڈی لی جاتی رہی۔ شریف خاندان کی جانب سے قائم کردہ کمپنیوں میں ٹی ٹی یا ناصر لوتھا جیسے کردار نکلتے ہیں۔ ناصر لوتھا نے پاکستان آ کر بیان ریکارڈ کرایا اور استغاثہ کا گواہ بھی بن چکا ہے۔ ناصر لوتھا غیر ملکی شہری ہے جس کیساتھ فراڈ کیا گیا۔


About the author

عدیل رحمان (معاون مُدیر)

عدیل رحمان پاک ایشیاء میں بطور معاون مُدیر کے طور پر اپنی خدمات ادا کر رہے ہیں- یہ پاک ایشیاء کے ابتدائی ساتھیوں میں سے ایک ہیں اور انتہائی جانفشانی سے کام کرتے ہیں اللہ تعالیٰ نے انہیں منفرد تخلیقی صلاحیتوں سے نوازا ہے جس کا اظہار اکثر اُن کی خبروں کی سُرخیوں سے بھی لگایا جا سکتا ہے۔

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.




From Google

WordPress Video Lightbox Plugin