پاکستان عدالت

پنجاب حکومت عوام کو سہولتیں دینے میں ناکام ہو گئی، چیف جسٹس

لاہور:  لاہور سپریم کورٹ رجسٹری میں کڈنی اینڈ لیور ٹرانسپلانٹ انسٹی ٹیوٹ سے متعلق ازخود نوٹس کی سماعت ہوئی، چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا پنجاب میں نااہلی اور نکماپن انتہا کو پہنچ چکا، آج تک ایک کمیشن نہیں بن سکا۔

چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے کڈنی اینڈ لیور ٹرانسپلانٹ انسٹی ٹیوٹ سے متعلق ازخود نوٹس کی سماعت کی، چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ گزشتہ سماعت پر بھی یہی کہا گیا تھا، حکومت نے 22 ارب روپے لگا دیئے جوواپس آنے چاہئیں۔چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ پنجاب حکومت کی نااہلی کوتحریری حکم کا حصہ بنا رہے ہیں، آپ سہولتیں دینے میں ناکام ہیں، لوگ خود پوچھ لیں گے۔ عدالت نے پی کے ایل آئی ازخود نوٹس کی سماعت فروری کے آخری ہفتے تک ملتوی کر دی۔


پاک ایشیاء ایک غیر منافع بخش ادارہ ہے۔ ہماری صحافت کو سرکاری اور کارپوریٹ دباؤ سے آزاد رکھنے کے لیے  مالی تعاون کیجیے نیز اس خبر کے حوالے سے اپنی آراء کا اظہار کمنٹس میں کریں اور شیئر کر کے ہماری حوصلہ افزائی کریں

About the author

عدیل رحمان (معاون مُدیر)

عدیل رحمان پاک ایشیاء میں بطور معاون مُدیر کے طور پر اپنی خدمات ادا کر رہے ہیں- یہ پاک ایشیاء کے ابتدائی ساتھیوں میں سے ایک ہیں اور انتہائی جانفشانی سے کام کرتے ہیں اللہ تعالیٰ نے انہیں منفرد تخلیقی صلاحیتوں سے نوازا ہے جس کا اظہار اکثر اُن کی خبروں کی سُرخیوں سے بھی لگایا جا سکتا ہے۔

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.