پاکستان تازہ خبر

ماڈل ٹاؤن کیس میں جے آئی ٹی کا قیام، ‘سپریم کورٹ نے آج اپنا قول پورا کردیا’

اسلام آباد: پاکستان عوامی تحریک (پی اے ٹی) کے سربراہ طاہر القادری کا کہنا ہے کہ سپریم کورٹ کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ انہوں نے انصاف کا بول بولا کیا۔

سپریم کورٹ میں سانحہ ماڈل ٹاؤن پر لیے گئے از خود نوٹس کی سماعت کے موقع پر ذرائع ابلاغ سے بات چیت کرتے ہوئے طاہر القادری کا کہنا تھا کہ جے آئی ٹی کے قیام کا فیصلہ کر کے عدالت عظمیٰ نے دوبارہ انصاف کی فراہمی کی امید کا چراغ روشن کردیا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ جس 5 رکنی لارجر بینچ نے کیس کی سماعت کی، انہوں نے ماڈل ٹاؤن سانحے میں جاں بحق ہونے والے 17 افراد کے مظلوم، کمزور، بے کس اور مجبور پسماندگان کے چہروں پر خوشیاں لوٹا دی ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ عدالت نے پیغام دے دیا ہے کہ پاکستان میں عدل و انصاف کے چراغ گل نہیں ہوئے، آج بھی کوئی سپریم کورٹ کا دروازہ انصاف کے لیے کھٹکھٹائے تو اسے انصاف مل سکتا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ سپریم کورٹ اور چیف جسٹس نے مسکینوں مظلوموں کے لیے اپنا دروازہ کھول کر اپنا قول پورا کر کے دکھایا ہے۔

طاہر القادری نے مزید کہا کہ میں نے پانچوں ججز کا بہت شکریہ ادا کرتا ہوں کہ انہوں نے سماعت کے دوران میرا موقف بہت محبت، اطمینان اور توجہ سے سنا۔

سربراہ عوامی تحریک نے کہا جے آئی ٹی بنانے کا فیصلہ عدالت نے کیا ہے اور حکومتِ پنجاب نے اس پر اتفاق کرلیا۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز سانحہ ماڈل ٹاؤن کیس میں سپریم کورٹ کا 5 رکنی لارجر بینچ تشکیل دیا گیا تھا جس کی سماعت آج ہوئی تھی۔

سپریم کورٹ کے بینچ میں چیف جسٹس میاں ثاقب نثار، جسٹس آصف سعید کھوسہ، جسٹس شیخ عظمت سعید، جسٹس فیصل عرب اور جسٹس مظہر عالم خان میاں خیل پر مشتمل تھے

عدالت عظمیٰ کی جانب سے مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف، قومی اسمبلی کے اپوزیشن لیڈر شہباز شریف، رہنما حمزہ شہباز، رانا ثناء اللّٰہ، چوہدری نثار، خواجہ آصف سمیت 146 افراد کو نوٹسز جاری کیے گئے تھے۔

یاد رہے کہ 17 جون 2014 کو لاہور کے علاقے ماڈل ٹاون میں تحریک منہاج القران کے مرکزی سیکریٹریٹ اور پاکستان عوامی تحریک (پی اے ٹی) کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری کی رہائش گاہ کے سامنے قائم تجاوزات کو ختم کرنے کے لیے آپریشن کیا گیا تھا۔

آپریشن کے دوران پی اے ٹی کے کارکنوں کی مزاحمت کے دوران ان کی پولیس کے ساتھ جھڑپ ہوئی جس کے نتیجے میں 14 افراد ہلاک ہو گئے تھے جبکہ 90 کے قریب زخمی بھی ہوئے تھے۔


پاک ایشیاء ایک غیر منافع بخش ادارہ ہے۔ ہماری صحافت کو سرکاری اور کارپوریٹ دباؤ سے آزاد رکھنے کے لیے مالی تعاون کیجیے نیز اس خبر کے حوالے سے اپنی آراء کا اظہار کمنٹس میں کریں اور شیئر کر کے ہماری حوصلہ افزائی کریں

About the author

عدیل رحمان (معاون مُدیر)

عدیل رحمان پاک ایشیاء میں بطور معاون مُدیر کے طور پر اپنی خدمات ادا کر رہے ہیں- یہ پاک ایشیاء کے ابتدائی ساتھیوں میں سے ایک ہیں اور انتہائی جانفشانی سے کام کرتے ہیں اللہ تعالیٰ نے انہیں منفرد تخلیقی صلاحیتوں سے نوازا ہے جس کا اظہار اکثر اُن کی خبروں کی سُرخیوں سے بھی لگایا جا سکتا ہے۔

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.