fbpx
پاکستان عدالت

فیض آباد دھرنا کیس، فیصلہ محفوظ

 سپریم کورٹ نے فیض آباد دھرنا ازخود نوٹس کیس کا فیصلہ محفوظ کرلیا۔ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے ریمارکس دیئے کہ کیا وزیراعظم سپریم کورٹ اور قانون سے بالا تر ہیں، اٹارنی جنرل کو ای سی سی اجلاس میں بلا لیا تھا تو انکار کر دیتے، ایک جماعت ملک تباہ کرنے کیلئے بنی اور آپ کچھ نہیں کرسکے۔

 سپریم کورٹ میں فیض آباد دھرنا کیس کی سماعت ہوئی۔ ڈپٹی اٹارنی جنرل نے دو رکنی بنچ کو بتایا کہ اٹارنی جنرل کو اقتصادی رابطہ کمیٹی اجلاس میں بلا لیا گیا تھا، جس پر جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے سوال کیا کہ اٹارنی جنرل کا معاشیات سے کیا تعلق ہے، وزیراعظم نے ان کو بلالیا تھا توکیا آفت آگئی تھی، وہ انکار کر دیتے۔جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے استفسار کیا کہ کیا وزیراعظم سپریم کورٹ اور قانون سے بالا تر ہیں؟ یا اٹارنی جنرل وزیراعظم کے ملازم ہیں؟ کیا وزیراعظم نے کہا کہ سماعت ملتوی کر دیں ؟ جسٹس قاضی نے مزید کہا کیا یہاں کوئی مذاق چل رہا ہے، آپ لوگوں کو شرمندگی محسوس نہیں ہوتی، میں اٹارنی جنرل ہوتا تو استعفیٰ دے دیتا۔ انہوں نے کہا پاکستان جنگ سے نہیں آئینی جدوجہد سے بنا، میرے والد نے تحریک آزادی کی جدوجہد میں حصہ لیا، ہم نے اس ملک کو کیا کر دیا ہے اور کیا کرتے جا رہے ہیں۔


پاک ایشیاء ایک غیر منافع بخش ادارہ ہے۔ ہماری صحافت کو سرکاری اور کارپوریٹ دباؤ سے آزاد رکھنے کے لیے مالی تعاون کیجیے نیز اس خبر کے حوالے سے اپنی آراء کا اظہار کمنٹس میں کریں اور شیئر کر کے ہماری حوصلہ افزائی کریں

About the author

عدیل رحمان (معاون مُدیر)

عدیل رحمان پاک ایشیاء میں بطور معاون مُدیر کے طور پر اپنی خدمات ادا کر رہے ہیں- یہ پاک ایشیاء کے ابتدائی ساتھیوں میں سے ایک ہیں اور انتہائی جانفشانی سے کام کرتے ہیں اللہ تعالیٰ نے انہیں منفرد تخلیقی صلاحیتوں سے نوازا ہے جس کا اظہار اکثر اُن کی خبروں کی سُرخیوں سے بھی لگایا جا سکتا ہے۔

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.




From Google