fbpx
دنیا سیاست

میلانیا سب کچھ خطرے میں ڈالنے کو تیار ہیں

میلانیا ، ٹرمپ کے نقش قدم پر چل پڑیں

ماضی میں مختلف میڈیا رپورٹس میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ میلانیا اور ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان تعلقات کشیدہ ہیں مگر گزشتہ سال کے آخر میں ایک انٹرویو میں امریکی خاتون اول نے کہا تھا کہ ان کی اور شوہر کی کیمسٹری بہت ملتی ہے، اور تعلقات کے حوالے سے تمام خبریں بے بنیاد ہیں۔

تاہم اب فرانس میں جی 7 کانفرنس کے دوران ان کی کینیڈا کے وزیراعظم جسٹن ٹروڈو کے ساتھ ایک تصویر انٹرنیٹ پر وائرل ہوگئی ہے اور آن لائن اس پر متعدد پرمزاح حملے کسے گئے ہیں۔

اتوار کو کانفرنس کے دوران عالمی رہنماﺅں اور ان کی شریک حیات کی تصاویر لی گئی تھیں مگر میلانیا ٹرمپ کی جانب سے کینیڈین وزیراعظم کے خیرمقدم کی تصویر انٹرنیٹ صارفین کی توجہ کا مرکز بن گئی، حالانکہ امریکی صدر کی تصاویر بھی کافی دلچسپ ہیں۔

ٹوئٹر پر اس تصویر پر متعدد افراد نے کمنٹس کیے کیونکہ ان کو لگ رہا تھا کہ امریکی خاتون اول کینیڈا کے وزیراعظم کو پسند کرنے لگی ہیں، جبکہ میلانیا لو ٹرمپ ہیش ٹیگ بھی ٹرینڈنگ کرنے لگا۔

ایک صارف نے لکھا ‘میلانیا سب کچھ خطرے میں ڈالنے کے لیے تیار ہیں’

ایک اور کا کہنا تھا ‘ایسا نظر آتا ہے کہ میلانیا نے بھی کینیڈا بھاگنے کے منصوبے پر غور شروع کردیا ہے’۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ 2 سال قبل یعنی فروری 2017 میں صدر ٹرمپ کی بیٹی ایوانکا کی جسٹن ٹروڈو کو دیکھنے کی تصاویر بھی اسی طرح وائرل ہوئی تھیں اور اس وقت بھی لوگوں کو لگا تھا کہ ایوانکا کینیڈین وزیراعظم کو پسند کرنے لگی ہیں۔

Image result for melania trump viral pic with canadian pm

ویسے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اس موقع پر پیچھے نہیں رہے۔

پہلے انہوں نے فرانس کی خاتون اول سے گال پر بوسہ لیا۔

رائٹرز فوٹو

مگر جو تصویر زیادہ دلچسپ ہے وہ جرمن چانسلر کے ساتھ تھی۔

رائٹرز فوٹو

About the author

عدیل رحمان (معاون مُدیر)

عدیل رحمان پاک ایشیاء میں بطور معاون مُدیر کے طور پر اپنی خدمات ادا کر رہے ہیں- یہ پاک ایشیاء کے ابتدائی ساتھیوں میں سے ایک ہیں اور انتہائی جانفشانی سے کام کرتے ہیں اللہ تعالیٰ نے انہیں منفرد تخلیقی صلاحیتوں سے نوازا ہے جس کا اظہار اکثر اُن کی خبروں کی سُرخیوں سے بھی لگایا جا سکتا ہے۔

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.




From Google